نیکی میں سرور اور بدی سے نفرت……….ایمان کی ساٹھ سے زیادہ شاخیں

نیکی میں سرور اور بدی سے نفرت……….ایمان کی ساٹھ سے زیادہ شاخیں

[ads1]

ساٹھ سے چند اوپر چیزیں انسان میں پیدا ہوجائیں تو اسے نیکی میں سرور اور بدی سے نفرت حاصل ہوگی۔

رسول اللہ ﷺ کا فرمان ہے

اَلْإِ یْمَانُ بِضْعُ وَّسِتُّوْنَ شُعْبَۃً۔

ایمان کی ساٹھ سے کچھ اوپر شاخیں ہیں

(1صحیح البخاری،کتاب الایمان،باب أمور الایمان۔ (2)صحیح مسلم ،کتاب الایمان،باب بیان عد شعب الایمان و أفضلھا وأدنا ھا وفضیلۃ الحیاء
ایمان کی شاخوں کی تین اقسام ہیں

(۱) … دل کے کام
(۲)… زبان کے کام
(۳) … بدن کے کام
دل کے اعمال میں ایمان کی (۲۴) شاخیں ہیں

۱۔ اللہ پر ایمان لانا
۲۔اللہ کے فرشتوں اور اس کی کتابوں اور اس کے رسولوں پر ایمان لانا
۳۔تقدیر پر ایمان لانا
۴۔آخرت کے دن پرایمان لانا
۵۔اللہ کی محبت
۶۔اللہ کے لیے محبت اور اللہ کے لیے نفرت
۷۔نبی ﷺ کی محبت
۸۔نبی ﷺ کی تعظیم
۹۔آپﷺ کی سنت کی پیروی
۱۰۔اخلاص
۱۱۔ توبہ
۱۲۔خوف
۱۳۔امید
۱۴۔ شکر
۱۵۔وفاء
۱۶۔صبر
۱۷۔ رضا
۱۸۔توکل
۱۹۔رحمت
۲۰۔تواضع
۲۱۔تکبر کو چھوڑنا
۲۲۔حسد کو چھوڑنا
۲۳۔غضب کو چھوڑنا
۲۴۔ کینہ کو چھوڑنا
زبان کے اعمال کاتعلق ایمان کی سات شاخوں سے ہے

۱۔توحید کا اقرار
۲۔تلاوت قرآن
۳ ۔ علم کو سیکھنا
۴ ۔ علم کو سکھانا
۵۔ دعا
۶۔ ذکر و استغفار
۷۔ بے ہودہ کلام سے بچنا
بدن کے اعمال کا تعلق ایمان کی (۳۸) شاخوں سے ہے۔ ان میں سے کچھ کا تعلق اعیان سے ہے اور وہ (۱۵) ہیں

۱۔ حسی اور حکمی طہارت
۲۔ ستر کو ڈھانپنا
۳۔ فرض و نفل نماز
۴۔ زکوٰۃ
۵۔ گردنوں کو آزاد کرنا
۶۔ سخاوت
۷۔ فرض و نفل روزہ
۸۔ حج و عمرہ
۹۔ طواف
۱۰۔اعتکاف
۱۱۔ لیلۃ القدر کو تلاش کرنا
۱۲۔ دین کے لیے ہجرت
۱۳۔ نذر کو پورا کرنا
۱۴۔ قسموں میں کوشش کرنا
۱۵۔ کفارہ کو ادا کرنا
کچھ کا تعلق بالتبع ہے اور وہ چھ شاخیں ہیں

۱۔ نکاح کے ساتھ پاک دامنی اختیار کرنا۔
۲۔ اہل و عیال کے حقوق ادا کرنا ۔
۳۔ والدین سے نیکی کرنا ۔
۴۔ اولاد کی تربیت کرنا۔
۵۔ صلہ رحمی کرنا۔
۶۔ بڑوں کی اطاعت یا غلاموں سے نرمی کرنا۔
کچھ کا تعلق عوام سے ہے اور یہ سترہ (۱۷) شاخیں ہیں

۱۔ عدل کے ساتھ امارت کا قیام۔
۲۔ جماعت کی متابعت۔
۳۔ اہل امر کی اطاعت ۔
۴ ۔ لوگوں کے درمیان اصلاح کرانا۔
۵۔ نیکی پر تعاون۔
۶۔ حدود کو قائم کرنا۔
۷۔ جہاد
۸۔ امانت کو ادا کرنا۔
۹۔ قرض کو ادا کرنا۔
۱۰۔ ہمسایہ کا احترام کرنا۔
۱۱۔ معاملات کا بہتر بنانا۔
۱۲۔ مال کو فضول خرچی کے بغیر خرچ کرنا۔
۱۳۔ سلام کا جواب دینا۔
۱۴۔ چھینک کا جواب دینا۔
۱۵۔ لوگوں سے تکلیف کو دور کرنا۔
۱۶۔ فضول اور بے ہودہ کاموں سے پرہیز کرنا۔
۱۷۔ راستہ سے تکلیف کو ہٹانا۔

ان کا مجموعہ۶۹ بن جاتا ہے۔ فتح الباری؍کتاب الایمان، ج:۱

Advertisements